• narrow screen resolution
  • wide screen resolution
  • fluid screen resolution
  • Increase font size
  • Default font size
  • Decrease font size
  • style1 color
  • style2 color
  • style3 color
پس منظر

بینک دولت پاکستان قومی مالی خواندگی پروگرام کا آغاز کر چکا ہے۔ یہ پاکستان میں اپنی نوعیت کا پہلا پروگرام ہے جسے ایشیائی ترقیاتی بینک کے مالی خدمات تک رسائی میں بہتری لانے کے فنڈ (آئی اے ایف ایس ایف) سے اعانت مہیا کی جاتی ہے۔ اس منصوبے کا مقصد عوام کو بنیادی مالی تصورات کے بارے میں معلومات کی فراہمی اور ان کی سوجھ بوجھ بڑھانا، بجٹ سازی ، بچتوں، سرمایہ کاری، قرضوں کے انتظام کی مہارت اور رویے پیدا کرنا ہے اور اس میں توجہ پاکستان کے کم آمدنی والے اور پسماندہ طبقات پر مرکوز کی گئی ہے۔

 

اس پروگرام کا آغاز تھرڈ پارٹی سروس پروائیڈر کے ذریعے ایک پائلٹ پروجیکٹ سے کیا گیا تا کہ اس پروگرام کی اثرانگیزی، اس کے نصاب، طریقہ کار اور قبولیت وغیرہ کو جانچا جا سکے۔ اس کے تحت پاکستان کے 53 اضلاع میں 1000 سے زائد دو روزہ کلاس روم ورکشاپس منعقد کی گئیں۔ پائلٹ پروجیکٹ کے بعد پروگرام کے اثرات، کوتاہیوں/خامیوں اور تربیت دینے والے ذرائع کی اثرانگیزی کو جانچا گیا تا کہ قومی مالی خواندگی پروگرام قومی سطح پر شروع کرنے میں مجموعی بہتری لائی جا سکے۔

 

اسٹیٹ بینک نے پائلٹ پروگرام کے جائزے کی بنیاد پر اپنے اندرونی ذرائع اور مالی اداروں اور دیگر اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ شراکت داری کی بنیاد پر قومی مالی خواندگی پروگرام کو قومی سطح پر شروع کیا ہے۔ اس پورے پروگرام کا انتظام ’’مالی خدمات تک رسائی میں بہتری (آئی اے ایف ایس) کی کمیٹی چلاتی ہے جو ان اداروں کے اراکین پر مشتمل ہے: پاکستان بینکس ایسوسی ایشن، پاکستان مائیکروفنانس نیٹ ورک، پاکستان تخفیف غربت فنڈ، مقامی تعلیمی شعبہ، اسٹیٹ بینک اور ایشیائی ترقیاتی بینک (مبصر) شامل ہیں۔

 

  • دائرہ کار اور مقصد

اس پروجیکٹ کا مقصد یہ ہے کہ مالی خواندگی کے قومی پروگرام کی تجرباتی مرحلے کی سرگرمیاں ملکی سطح تک بڑھائی جائیں اور اس کے لیے تقریباً ایک ملین بالغ افراد تک مرحلہ وار انداز میں رسائی حاصل کی جائے۔ یہ پانچ سالہ پروجیکٹ کم آمدن اور اوسط آمدن والے طبقوں کو ہدف میں رکھے گا اور دونوں صنفوں پر مرکوز ہوگا۔ مالی خواندگی کے قومی پروگرام کے ملکی سطح پر آغاز کے اہم مقاصد یہ ہیں:

i۔          عوام کو مالی تصورات، بینکاری/ مالی مصنوعات اور سہولتوں کی معلومات اور سوجھ بوجھ فراہم کرنا

ii۔         اِن امور میں ان کی مہارت بڑھانا اور نقطۂ نظر پیدا کرنا: بجٹ سازی، بچت، سرمایہ کاری، قرضوں کا انتظام، مالی گفت و شنید، حقوق اور ذمہ داریاں، اسلامی بینکاری

iii۔        مالی نتائج بہتر بنانے کے لیے رویّہ بدلنے میں اور عادات پروان چڑھانے میں معاونت کرنا: اِن امور کے ذریعے مالی طور پر طاقتور بنانا، بچت میں اضافہ، قرضوں کا بہتر انتظام، تصوراتی مالی دباؤ یا اطمینان

iv۔        مالی شمولیت: زیرِ ہدف طبقے کو ڈی ٹی اے اور بینک اکاؤنٹ کھلوانا تاکہ وہ مالی طور پر بااختیار ہو سکے۔